بار ایسوسی ایشن کشمیر

390
 سخت گیر عناصر ماضی کو دھونے کی کوشش میں
اب میں بھی ہوں ہندوستانی
نئی تشکیل شدہ کشمیر ایڈوکیٹ ایسوسی ایشن کے ساتھ مسلسل توہین آمیز سلوک
جموں و کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن سری نگر کئی دہائیوں سے علیحدگی پسند نظریہ کی کٹر حامی رہی ہے۔ یہ جموں و کشمیر میں دہشت گردی اور علیحدگی پسند نظریہ کی حمایت میں سب سے آگے رہی ہے۔ ایسوسی ایشن کے سری نگر چیپٹر نے گزشتہ برسوں میں کئی کانفرنسوں کا انعقاد کیا ہے جہاں آزادی، پاکستان کی حمایت اور بھارت کے خلاف نعرے لگائے گئے۔ یہ انجمن انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں پر سیمینار منعقد کراکے جموں و کشمیر پولیس اور دیگر سیکورٹی فورسز کی شبیہ کو خراب کرنے میں بھی سب سے آگے رہی ہے۔ ان کا دوغلا پن اس حقیقت سے عیاں ہے کہ گزشتہ برسوں میں انجمن نے کبھی بھی پاکستان کی سرپرستی میں دہشت گردوں کے ہاتھوں ہونے والے ناقابل بیان تشدد اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے خلاف آواز نہیں اٹھائی۔
وادی کشمیر میں وکلاء کی فلاح و بہبود کبھی بھی انجمن کی فکر نہیں رہی۔ ان کا ایجنڈا ہمیشہ سیاسی اور کٹر بھارت مخالف  رہا ہے۔ کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن نے خود کو ملک دشمن جذبات کے لیے ایک زرخیز سیاسی پلیٹ فارم کے طور پر پیش کیا۔ اس ایسوسی ایشن کے بنیادی ارکان نے مسئلہ کشمیر پر اپنا کیریئر بنایا۔ ان تنازعات کے سوداگروں نے عالمی سطح پر ہندوستان کو بدنام کرنے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔
ایسوسی ایشن کے سرکردہ ارکان کا بدنیتی پر مبنی رویہ اس قدر غالب رہا ہے کہ کئی سالوں سے قوم پرستانہ سوچ رکھنے والے وکلاء کو کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی رکنیت دینے سے مسلسل انکار کیا جا رہا ہے۔
 
’’رونگا کے بدلتے رنگ‘‘
 کشمیر ایڈوکیٹس ایسوسی ایشن کو بدنام کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں
کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی خطرناک بالادستی کو توڑنے کے لیے، نوجوان وکلاء کے ایک گروپ نے حال ہی میں کشمیر ایڈوکیٹس ایسوسی ایشن (KAA) تشکیل دی ہے۔ KAA کا واحد مقصد وادی میں قانونی برادری کی فلاح و بہبود ہے۔دراصل اس طرح کی صف بندی بار ایسوسی ایشن سری نگر کے غنڈوں کی سوچ کے برخلاف ہوئی ہے اس لئے وہ ایسے نوجوان وکلاء کو بدنام کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے جنہوں نے ایک ایسا پلیٹ فارم بنانے کی جسارت کی ہے جہاں ایک حقیقی وکیل اپنی بات پیش کر سکے اور برادری کی فلاح و بہبود کے بارے میں سوچ سکے۔
کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن نے کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن کے ممبران کے خلاف مہم شروع کر رکھی ہے۔ وہ نوجوان وکلاء کو بدنام کرنے کی مسلسل کوشش کر رہے ہیں تاکہ انہیں بدنام کیا جا سکے کوشش یہ ہے کہ رونگا اور گینگ کی اجارہ داری کو کوئی اور چیلنج نہ کر سکے۔
وادی کے طول و عرض میں یہ بات مشہور ہے کہ J&K ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن (JKHCBA) کشمیر نے کبھی بھی اس خطے کے وکلاء کی فلاح و بہبود کے لیے کام نہیں کیا۔ انہوں نے ہمیشہ سیاسی ایجنڈے پر عمل کیا ہے۔ کے اے اے کی تشکیل نے ’’بھان متی کے کنبے ‘‘ کو پریشان کر دیا ہے۔ کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے عہدیدار KAA کی تشکیل کے بعد سے بے چینی محسوس کر رہے ہیں۔
KAA کی تشکیل سے خطرہ محسوس کرتے ہوئے، کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے چیئرمین ایڈوکیٹ نذیر احمد رونگا نے دیگر عہدیداروں اور ایگزیکٹو ممبران کے ساتھ ہرایک ضلع کا دورہ کرکے وہاإ کی ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کے ساتھ ملاقات کی ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ وہ اپنی مطابقت کھو نہ جائیں۔ نذیر رونگا اور جے کے ایچ سی بی اے کشمیر کے دیگر عہدیداران اور ممبران نے حال ہی میں جموں و کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن، جموں چیپٹر کا بھی دورہ کیا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ماضی میں جے کے ایچ سی بی اے کشمیر نے جموں بار ایسوسی ایشن کے ممبران کوکبھی بھی کسی گنتی میں شمار نہیں کیا نہ ہی کبھی ان کی آو بھگت کی دراصل یہ  سب کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کومربوط رکھنے کے لیے کیا جا رہا ہے۔
مزید برآں، چیئرمین ایڈوکیٹ نذیر احمد رونگا کی قیادت میں کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی ٹیم نے حال ہی میں جموں و کشمیراور لداخ کے ہائی کورٹ معزز چیف جسٹس ، جسٹس پنکج متل سے بھی ملاقات کی۔ یہ رسائی KAA کے نوجوان وکلاء کی معزز چیف جسٹس سے ملاقات کے بعد کی گئی۔
یہ سب خسارے سے بچنے کا ایک عمل ہے۔ کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن ماضی کے گناہوں کو دھونے کی کوشش کر رہی ہے۔ لیکن اب مطابقت برقرار رکھنا رونگا اور گینگ کے لیے آسان نہیں ہوگا۔ ان کی اجارہ داری کو کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن کے نوجوان وکلاء نے قابلیت پر چیلنج کیا ہے۔
کئی دہائیوں سے، کشمیر کے قانونی برادری کے لوگ جانتے تھے کہ کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن ہمیشہ وادی میں سیاسی مقاصد کی پیروی کر رہی ہے، اور علیحدگی پسند اور علیحدگی پسند بیانیہ کو غالب رکھتی ہے۔ برادری کی فلاح و بہبود پر توجہ دینے سے دور، انہوں نے نوجوان طبقے کا استحصال کیا۔ سرکردہ وکلاء کے اس گٹھ جوڑ نے نوجوان وکلاء کو دہشت زدہ کر دیا، ان میں گہری خوف کی نفسیات پیدا کی اور انہیں علیحدگی پسندوں، پتھربازوں،بالائے زمین کارکنوں وغیرہ کا دفاع کرنے پر مجبور کیا۔
کشمیر سینٹرل کے حالیہ ایڈیشن میں نذیر احمد رونگا کے بیانات پڑھ کر ہنسی آگئی۔ جموں کے وکلاء سے ان کی نئی محبت کے بارے میں سوالات کا جواب دیتے ہوئے، رونگا نے کہا تھا، “میں حریت کانفرنس سے وابستہ نہیں ہوں۔ میرا ان سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ میرا عسکریت پسندی سے کوئی تعلق نہیں۔ میں نے زندگی بھر اس سے ہمیشہ انکار کیا ہے۔”
رونگا کا بیان مزاحیہ ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ نذیر رونگا کئی دہائیوں سے علیحدگی پسند نظریے کا کٹر حامی رہا ہے۔ وہ نوجوان وکلاء کو پتھراؤ کرنے والوں، بالائے زمین کارکنوں، عسکریت پسندوں اور دیگر ریاست مخالف عناصر کے لیے بے گناہی کا دعویٰ کرنے والے کیسوں کو لینے کے لیے تیار کر رہا ہے۔ رونگا کا تعلق میر واعظ عمر فاروق کی زیر قیادت حریت کانفرنس سے تھا۔ انہوں نے مسلسل علیحدگی پسندوں، اوور گراؤنڈ کارکنوں اور پتھراؤ کرنے والوں کے لیے بے گناہی کا دعویٰ کیا ہے۔ انہوں نے 2008، 2010 اور 2016 کے عوامی ایجی ٹیشن کے دوران بڑے پیمانے پر امن و امان کے مسائل پیدا کرنے کے مقصد سے سیمینار، ریلیاں اور دیگر پروگرام منعقد کیے تھے۔
رونگا کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن (KHCBA) کے سابق صدر بھی ہیں۔ وہ اپنے آدمیوں کو کشمیر کی مرکزی دھارے کی سیاسی جماعتوں میں شامل کر کے سیاسی طور پر ایک آسان پوزیشن سے لطف اندوز ہو رہا ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ وہ ریاست کے غیظ سے بچ سکے۔
آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد جب حکومت نے رونگا پر پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا تو اس کے خلاف کارروائی کے لیے دستاویزات میں بتایا گیا کہ وہ میر واعظ عمر فاروق کی زیر قیادت حریت کانفرنس سے وابستہ تھے۔ ایک وکیل کے طور پر، انہوں نے مسلسل عدالتوں میں علیحدگی پسندوں کا دفاع کرنے اور ان کے لیے بے گناہی کا دعویٰ کرنے کی کوشش کی تھی۔ انہوں نے سیمیناراورریلیاں بھی منعقد کیں اور نوجوانوں کے دماغوں کو غلط سمت میں بھڑکانے کے مقصد سے مختلف پروگرام ترتیب دئیے۔ ان کی توجہ وکلاء کو قانونی معاملات پر توجہ دینے کی اجازت نہیں دے رہی ہے۔ ان کی توجہ بار ایسوسی ایشن کو ملک دشمن جذبات کے لیے ایک زرخیز سیاسی پلیٹ فارم اور علیحدگی پسندوں کے حامی ایجنڈے کو تیار کرنے کے لیے ایک انٹرن شپ کی جگہ بنانا ہے۔
یہ بات قابل ذکر ہے کہ رونگا کے بیٹے عزیر نذیر رونگا کے گھر پر اس سال 2 اکتوبر کو کاؤنٹر انٹیلی جنس کشمیر (سی آئی کے) نے چھاپہ مارا تھا۔ ان کے بیٹے عزیر نذیر کو سونہ وار کے ہوٹل CH2 میں انٹیلی جنس اور سیکیورٹی ایجنسیوں کے اہلکاروں کے ساتھ شراب نوشی کرتے اور کھانا کھاتے دیکھا گیا۔ رونگا اور گینگ کے بچے کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن کے قیام کے بعد سختی محسوس کر رہے ہیں اور کے اے اے کے ممبران کو بدنام کرنے میں سب سے آگے ہیں۔
رونگا اور گینگ بالواسطہ طور پر نوجوان وکلاء کو دھمکیاں دے رہے ہیں کہ وہ پیچھے ہٹ جائیں اور کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن سے وابستہ نہ ہوں۔ وہ نوجوان وکلاء کو سنگین نتائج کی دھمکیاں دینے کی کوشش کر رہے ہیں جیسے مرحوم ایڈووکیٹ سید بابر جان قادری، جنہیں ان کے گھر پر نامعلوم مسلح افراد نے قتل کر دیا تھا۔
نذیر رونگا کا چھوٹا بیٹا عمیر ہائی کورٹ کے احاطے میں نوجوان وکلاء کے خلاف مخالفانہ رویہ اپنا کر بالواسطہ دھمکیاں دے رہا ہے۔ عمیر رونگا کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن کے ممبران کو ڈھیلے ڈھالے طریقے سے بدنام کر رہے ہیں۔ کشمیر میں دہشت گردی کے ماحولیاتی نظام کے ساتھ ان کے والد کے روابط کو دیکھتے ہوئے، اس بدنیتی پر مبنی نقطہ نظر کو ختم نہیں کیا جا سکتا۔
قانونی برادری میں بہت سے لوگ کہتے ہیں کہ ایڈو جی این شاہین ایڈو رونگا سے زیادہ خطرناک ہیں۔
 
شاہین کا مستقل مقصد کشمیر کے نوجوانوں کو بھڑکانا ہے جب کہ وہ اور اس کے بچے عالیشان زندگی گزار رہے ہیں۔
کشمیر کے قانونی برادری اور باہر کے بہت سے لوگ جنہوں نے ایڈوکیٹ نذیر رونگا اور ایڈوکیٹ جی این شاہین کی سرگرمیوں کو قریب سے دیکھا ہے کہتے ہیں کہ شاہین رونگا سے زیادہ خطرناک ہے۔ شاہین کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن بنانے والے نوجوان وکلاء کو دھمکانے اور بدنام کرنے کی پوری کوشش کر رہی ہے۔ وہ کے اے اے کے نوجوان وکلاء کو بار ایسوسی ایشن کے ’کوکا پرے‘ کہتے ہیں۔
ایڈوکیٹ جی این شاہین جنوبی کشمیر کے مڈورہ ترال کے رہنے والے ہیں۔ ان کا تعلق جماعت اسلامی گھرانے سے ہے۔ اس کے قریبی خاندان کاایک رکن عسکریت پسند تھا اور مارا گیا۔ جی این شاہین کا تعلق حریت (جی) کے ایک دھڑے مسلم کانفرنس سے تھا۔ شاہین نے سید علی شاہ گیلانی کے نظریے کی مسلسل حمایت کی ہے، جو بنیادی طور پر علیحدگی پسند اور غیر قانونی ہے۔
شاہین کشمیر کونسل فار جسٹس نامی خود ساختہ تنظیم کے چیئرمین ہیں۔ انہوں نے آسیہ اندرابی کے ساتھ قریب سے کام کیا ہے اور ان کے ساتھ کئی پروگراموں میں شرکت کی ہے۔ شاہین ایڈوکیٹ میر عرفی اور ایڈوکیٹ محمد رفیق جو کے ساتھ جے کے ایل ایف کے رہنما محمد یاسین ملک اور نعیم خان کے وکیل ہیں۔ وہ اپنے فیس بک پیج پر ملک کے خلاف مسلسل زہر پھیلارہے ہیں۔
شاہین کی مسلسل کوشش کشمیر کے نوجوانوں کو بھڑکانا ہے جب کہ وہ خود ایک عالیشان زندگی گزار رہے ہیں۔ ان کے دو بچے ہیں ایک بیٹی زوہا فاطمہ اور ایک بیٹا خالد مرتضیٰ۔ شاہین چاہتا ہے کہ اس کے بچے بہترین تعلیم حاصل کریں لیکن وہ عام کشمیریوں کے بچوں کے لیے دہشت گردی کے راستے کی وکالت کرتے ہیں۔ وہ مسلسل متاثر کن نوجوان ذہنوں کو ریاست کے خلاف متاثر کر رہا ہے اور ان کے درمیان علیحدگی پسندانہ خیالات کو بیج رہا ہے۔
شاہین سرحد پار بیٹھے اپنے سیاسی آقاؤں کے کہنے پر وادی کشمیر کو غیر مستحکم کرنے کے لیے ہمیشہ پیش پیش رہتا ہے۔ وہ متعدد بار پاکستان کا دورہ کر چکے ہیں اور پاکستان میں اپنے آقاؤں کے ساتھ قریبی رابطے میں ہیں، اور ہمیشہ ان کی دھنوں پر رقص کرتے رہتے ہیں۔
شاہین کو امن و عامہ میں خلل ڈالنے سے روکنے کے لیے تین بار پی ایس اے کے تحت حراست میں لیا گیا۔ وہ ریاست کی خامیاں تلاش کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے، اور ہمیشہ پولیس اور دیگر سکیورٹی ایجنسیوں کو انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں کا ذمہ دار ٹھہراتا ہے۔ شاہین دہشت گردوں کے ہاتھوں کشمیریوں کے قتل عام پر دیدہ کور ہوچکا ہے۔ انہوں نے کبھی بھی ان کشمیریوں کے لیے بات نہیں کی جنہیں عسکریت پسندوں نے ان کے سیاسی نظریات کی وجہ سے بے دردی سے موت کے گھاٹ اتار دیا، کیونکہ وہ دہشت گردی مخالف موقف رکھتے تھے یا دیگر وجوہات کی بنا پر۔
آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد اور ہواؤں میں تبدیلی کو مدنظر رکھتے ہوئے، رونگا اور گینگ خود کو پوزیشن دینے کی کوشش کر رہے ہیں جیسا کہ ہندوستانی متعلقہ رہنے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔کشمیر ایڈووکیٹ ایسوسی ایشن کے قیام سے رونگا اور گینگ سمجھ گئے ہیں کہ ان کے پیروں تلے کی زمین سرک رہی ہے۔ اس لیے وہ خود کو زیادہ ہندوستانی کے طور پر پیش کر رہے ہیں اوران انقلابی نوجوانوںکو بدنام کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑ رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here