سیاسی بقا ءکیسے ممکن ہے ؟ سجاد لون کے سوا سب خسارے میں

307
جموںوکشمیر میں انتخابات کے حوالے سے ابہام موجود ہے ،کیونکہ اگلے انتخابات کے حوالے سے کوئی اشارہ نہیںمل رہا کہ کب ہوں گے لیکن اس ساری صورتحال میں سیاسی پارٹیاں اس مخمصے کا شکار ہیں کہ وہ خود کو ان متوقع انتخابات کے لئے کس طرح تیار کریں ۔ اعلیٰ سیاسی رہنمااس تذبذب میں ہیں کہ انہیں کن مسائل پر بات کرنی ہے اور ووٹروں کو کس طرح راغب کرنا ہے۔ خطے کی سب سے بڑی سیاسی جماعت نیشنل کانفرنس کی قیادت یہ ابھی تک یہ واضح نہیںکیا ہے کہ پارٹی کس بنیاد پر الیکشن لڑنا چاہتی ہے ،اگرچہ سنئیر عبداللہ کی طرف سے اس ضمن میں ملے جلے اشارے ملیں ہیں لیکن ایسا لگ رہا ہے کہ ڈاکٹر فاروق محتاط انداز میںسیاسی بساط پر کھیلانا چاہتے ہیں تاہم موجودہ سیاسی حالات سے وہ بھی کافی مغلوب نظر آتے ہیں ۔ دوسری جانب اس حوالے سے عمر عبداللہ نے چند ٹیلی ویژن انٹرویوز کو چھوڑ کر خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔
سجاد لون کی سربراہی میں ہونے والی پیپلز کانفرنس بظاہر ایک مستثنیٰ ہے۔ اگر اس کی بات پر یقین کیا جائے تو سجاد واضح اور دوٹوک ہے۔ وہ نہیں چاہتا کہ ناقابل عمل اور جذباتی مسائل کسی بھی طرح بیانیہ کا حصہ بن جائیں۔ ذرائع سے پتہ چلتا ہے کہ اعلیٰ ایگزیکٹو کی ایک حالیہ میٹنگ میں سجاد نے ان کی پارٹی کے کچھ ساتھیوں کی جانب سے نرم علیحدگی پسندانہ سیاست کو جگہ دینے کے بارے میں جو مشورہ دیا تھا اس کی سختی سے مخالفت کی۔ سجاد اور محبوبہ مفتی کو چھوڑ کر وادی کشمیر کی کسی بھی سیاسی جماعت کے پاس یہ واضح نہیں ہے کہ وہ عوام کے لیے کس قسم کی سیاست کا تصور کر رہے ہیں۔
این سی کی مضبوط لابی چاہتی ہے کہ پارٹی نئی حقیقت قبول کرے، اور اس پوزیشن پر خودکو استوار کرے
معتبر اندرونی ذرائع کے مطابق، نیشنل کانفرنس (NC) میں ایک مضبوط لابی نے پارٹی قیادت کو آرٹیکل 370 کے گرد سیاست کرنے پر اپنے تحفظات سے آگاہ کیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ لابی چاہتی ہے کہ پارٹی کو بہاو ¿ کے خلاف نہیں جانا چاہئے۔ بلکہ یہ مان لینا چاہیے کہ کھیل کے اصول بدل چکے ہیں اور قیادت کی جانب سے نئے اصولوں کے مطابق کھیل کھیلنا دانشمندی ہوگی۔
سینئر رہنماو ¿ں اور سابق وزراءپر مشتمل اس لابی کا کہنا ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ فریب کی سیاست ترک کر دی جائے اور لوگوں کو سچ بتایا جائے، چاہے وہ کتنی ہی تکلیف دہ کیوں نہ ہو۔ این سی کے ایک سینئر لیڈر نے سجاد لون جیسے لوگوں کی ثابت قدمی اور سیدھے پن کی کھل کر تعریف کی جنہوں نے سیاسی مہم جوئی کا انتخاب نہ کرنے کا فیصلہ کیا۔ مذکورہ رہنما نے کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ کشمیر کے تمام سیاسی رہنما اپنے متعصبانہ مفادات کے لیے نہیں بلکہ کشمیر کو مزید بدحالی سے بچانے کے لیے ذمہ داری کا مظاہرہ کریں۔
موصوف نے کہا کہ نیشنل کانفرنس میں بہت سے بڑے لیڈر ہیں جو ان خدشات کو بانٹتے ہیں۔ کشمیر کی سیاست میں سب کچھ سیاہ اور سفید میں ہے۔ ان میں سے ایک کا انتخاب کرنا مناسب ہوگا۔ اگر ہم ایسا نہیں کرتے ہیں تو یہ کشمیر کے لوگوں کی بڑی بے عزتی ہوگی۔
علیحدگی پسندی کی بقا کیلئے پاکستان محبوبہ پر بھاری سرمایہ لگا رہا ہے
2018 میںمحبوبہ مفتی حکومت گرنے سے بے خبر رہ گئی تھیں۔ کشمیر میں ان کے انتخابی امکانات بہت محدود ہیں، قطع نظر اس کے کہ انتخابات کب منعقد ہوں۔ محبوبہ خود کو بھارتی ریاست کی طاقت کے خلاف کھڑا کر کے اور شکار کھیل کر کھویا ہوا میدان دوبارہ حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ اس کا ہدف آئندہ الیکشن نہیں ہے – وہ خاص طور پر کشمیر کے سیاسی تھیٹر میں اپنی بیٹی کو مرکزی کردار میں کاسٹ کرنے کے بارے میںاس وقت سیاسی اکھاڑے میں سرگرم ہے۔
ان کی طرف سے جو اشارے ملے رہے ہیں ان کی رو سے پاکستان کشمیر میں علیحدگی پسند سیاست کو زندہ رکھنے کے لیے محبوبہ مفتی پر بہت زیادہ سرمایہ کاری کر رہا ہے۔ اس معیار کے مطابق بھی، مقصد الیکشن نہیں بلکہ اسٹریٹ تھیٹرس کی بحالی اور ہجوم کے ذریعے ناجائز طریقے سے حکومت کرنے کا اختیار ہے۔ خیال یہ ہے کہ طویل مدت میں اسی طریقہ کار کو استعمال کرتے ہوئے سودے بازی کی جائے جسے سید علی گیلانی نے تیار کردہ احتجاج کے ساتھ مکمل کیا تھا۔
کیا سجاد اور الطاف میں اختلاف ہے۔
سید الطاف بخاری کی اپنی پارٹی کو 05 اگست 2019 کے واقعات کے فوراً بعد ہوا کے خلاف جانے کا کریڈٹ جاتا ہے۔ یہ اب بنیادی طور پر مقامی انتظامیہ کے خلاف شکایات کی وجہ سے الجھن کا شکار ہے۔ الطاف اپنی مستقبل کی سیاست کے بارے میں واضح ہیں لیکن ان کے ذہن میں شکایات بہت زیادہ ہیں۔ انتخابی سیاست کے محدود تجربے کی وجہ سے وہ دونوں میں گڑبڑ کرتے ہیں جس کی وجہ سے کنفیوژن ہے۔بات چیت اور عوامی بات چیت کے دوران سجاد نے اشارہ دیاکہ وہ شکایات سے آگاہ ہیں۔ وہ جو وضاحت پیش کرتا ہے وہ یہ ہے کہ ان کے اقتدار میں آنے کے بعد ان غلطیوں کا ازالہ کیا جائے گا۔ اس کا موقف یہ ہے کہ کسی کو حقیقی ہدف یعنی طاقت سے توجہ نہیں کھونی چاہیے۔
الطاف اس وضاحت میں کیوں غائب لگتا ہے؟ شاید اس لیے کہ وہ اپنے کارکنوں کی طرف سے دباو ¿ کا سامنا کر رہا ہے، جن کی توقعات بہت زیادہ ہیں اور اس لئے وہ ہواکے مخالف سمت میں چل رہا ہے ۔ اس موڑ پر الطاف کو اقتدار کے حصول اور بیوروکریسی کے خلاف شکایات کے بارے میں واضح نظریہ اختیار کرنے کی ضرورت ہے۔
کشمیر کی بیوروکریسی ہمیشہ ملک کے کسی بھی حصے سے زیادہ طاقتور رہی ہے۔ حکومت کا مقصد یہ رہا ہے کہ تصادم کے حالات میں بیوروکریسی کو کسی بھی مداخلت کے بغیر حکومت کرنا چاہیے۔ یہیں پر سید الطاف بخاری اور ان کے کارکنان کا صبر کا دامن ہاتھ سے نکل جاتا ہے۔ چنانچہ ہم دیکھتے ہیں کہ بعض اوقات الطاف انتظامیہ کے سر اٹھانے میں محبوبہ اور دیگر کو پیچھے چھوڑ دیتے ہیں۔ گزشتہ چند ہفتوں کے دوران، الطاف NC اور PDP میں اپنے حریفوں کے مقابلے میں انتظامیہ پر اپنی تنقید میں زیادہ آواز اٹھا رہے ہیں۔
سجاد اور الطاف دونوں کا موقف ہے کہ بیوروکریسی کی کوتاہیاں غیر ارادی ہیں۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ بیوروکریسی کے خلاف
کوئی بھی شکایت این سی اور پی ڈی پی کے فائدے میں جاتی ہے۔
الجھن اس بات پر بھی ہے کہ مرکز جموں و کشمیر میں انتخابات کے انعقاد کے بارے میں کیا سوچ رہا ہے۔ این سی، کانگریس اور پی ڈی پی سمیت دیگر چھوٹے کھلاڑیوں کو اس بات کا کوئی اندازہ نہیں ہے کہ نئی دہلی کشمیر میں کس قسم کا سیاسی انتظام کر رہی ہے۔ ایک بڑا سوال جو عام طور پر پارٹی لائنوں کو کاٹتے ہوئے سیاسی رہنماو ¿ں کی طرف سے اٹھایا جا رہا ہے وہ یہ ہے کہ وزیر اعلیٰ کون ہوگا اور کہاں سے ہوگا۔
ایکس فار دی اسٹوری – براہ کرم اسے سجاد لون کی تصویر کے ساتھ لیں
سجاد لون کی سکیورٹی میں ڈھیل؟
بہت سے حلقوں میں یہ تاثر پایا جاتا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ پورا ایس ایس جی (اسپیشل سیکیورٹی گروپ کشمیر) عبداللہ خانوادے اور مفتیوں کی خدمت پر چھوڑ دیا گیا ہے۔ ایس ایس جی کے 300 سے زائد اہلکار ان کی حفاظت کرتے ہیں۔ ان کا کاروان ایل جی کے کاروان سے بڑا ہے۔ عبداللہ اور مفتی صرف علیحدگی پسندی کے بیانیے کو زندہ رکھنے کے لیے حکومت کی طرف سے ہر ایک مراعات حاصل کرتے ہیں۔ یہ کیسے جائز ہو سکتا ہے؟
اس نامہ نگار نے دو بار سجاد سے ملاقات کی۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ گیٹ پر ایک بھی پولیس والا موجود نہیں تھا کہ آنے کا مقصد پوچھے یا اندر کیوں جا رہا ہے اس بارے میں استفسار کیا جاتا۔ کتابوں پر، سجاد کو زیڈ پلس سیکیورٹی کور حاصل ہے۔
دوسری طرف کوئی کہہ سکتا ہے کہ عبداللہ اور مفتی کی رہائش گاہ پر پرندہ بھی پر نہیںمارسکتا۔ کچھ ایسے شواہد موجود ہیں جو بتاتے ہیں کہ پولیس اور سول بیوروکریسی کا ایک طبقہ اب بھی حکم دیتا ہے یا کم از کم مفتی اور عبداللہ کو دوسروں سے زیادہ ترجیح دیتا ہے۔
ایک اور حقیقی شکایت یہ ہے کہ اپنی پارٹی اور پیپلز کانفرنس کے کارکنوں اور جماعت عہدیداروں کو سیکورٹی وجوہات کی بنا پر لوگوں سے رابطہ قائم کرنے یا ان سے بات چیت کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ دوسری طرف، نیشنل کانفرنس اور پی ڈی پی کے کارکنان، جو ایک ہی سیکورٹی سے فائدہ اٹھاتے ہیں، انہیں مفت راستہ دیا جاتا ہے۔ اس طرح کی اور بھی بہت سی شکایتیں ہیں جنہوں نے الطاف اور سجاد دونوں کو پریشان کر رکھا ہے۔ دونوں نے اس پر مختلف ردعمل دیا ہے۔ سجاد خاموش ہے، الطاف ایسے معاملات پر احتجاج کرتا ہے۔ اس کے عوامی انداز کو مناسب طور پر ”نا خدا ہی ملا نہ وصال صنم“ کہا جا سکتا ہے۔
مندرجہ ذیل کہانی کا ایک الگ حصہ ہوگا، جسے ایک علیحدہ صفحہ پر لیا گیا ہے۔ براہ کرم اسے اس دھندلی تصویر کے ساتھ لیں جس کے لیے میں نے آپ کو لنک بھیجا تھا
سرخی
کشمیری سیاست دانوں کو درپیش سخت سچائیوں پر ایک سینئر این سی لیڈر
تعارف
نیشنل کانفرنس کے ایک لیڈر نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر کے زین کو بتایا
ہمیں ایمانداری سے فریب اور فریب پر مبنی سیاست کے دور کے خاتمے کی نشان دہی کرنی چاہیے۔ایک سوال جس کا میں اکثر سامنا کرتا ہوں وہ یہ ہے کہ عبداللہ کے قریبی مانے جانے والے کچھ سیاسی رہنماو ¿ں نے پارٹی کیوں چھوڑی؟ سیاسی جماعتوں میں تحریکیں نئی نہیں ہیں۔ وہ ہمیشہ انتخابی سیاست کا حصہ رہے ہیں۔ دیویندر رانا اور ہلال رحیم راتھر کا باہر جانا قومی کانفرنس کے لیے بہت بڑا نقصان تھا۔ میں پارٹی چھوڑنے والا آخری آدمی ہوں گا لیکن اپنی بات کہنے والا پہلا آدمی ہوں گا۔ جذباتی اور استحصالی سیاست کا دور ختم ہو چکا ہے۔آرٹیکل 370 اور 35A کی منسوخی اور ریاست کو دو مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں تقسیم کرنا بلاشبہ یک طرفہ فیصلہ تھا۔ یہ بالآخر جموں و کشمیر کے لوگوں کو بے اختیار کر نے کا باعث بنا۔ لیکن جغرافیائی سیاسی منظر نامے کے پیش نظر، یہ عمل کم از کم مستقبل قریب میں ناقابل واپسی نظر آتا ہے۔ لہذا ہمیں دو چیزوں پر توجہ مرکوز کرنی چاہئے:
1. لوگوں کی توجہ اس طرف سے ہٹا دیں جو محاذ آرائی سے حاصل نہ ہو سکے۔ آئیے جینا سیکھیں اور امن اور ہم آہنگی کے ساتھ جینے دیں۔ ہمیں اپنی نوجوان نسل کو محفوظ ماحول فراہم کرنا چاہیے جو کہ مفاہمت کی سیاست سے ہی ممکن ہے۔
2. دنیا میزائل کی رفتار سے ترقی کر رہی ہے۔ ہمیں اپنے کوکونوں کھدروںسے باہر نکالنا ہوگا اور ارتقاءکا حصہ بننے کی ضرورت ہے۔ اس کے لیے ہمیں تشدد کو اس کی تمام شکلوں اور مظاہر میں مسترد کرنے کی ضرورت ہے اور لوگوں کے پھلنے پھولنے کے لیے ایک محفوظ ماحول فراہم کرنا چاہیے۔
(اس سیکشن کے اندر خانہ)
ڈاکٹر فاروق عبداللہ پر
ہماری پارٹی کے اعلیٰ افسران زمینی حقیقت سے بے خبر ہیں۔ ماضی قریب تک، ڈاکٹر عبداللہ جموں و کشمیر میں واحد رہنما تھے جو نبض محسوس کرتے تھے اور کبھی بھی لہر کے ساتھ نہیں جاتے تھے۔ ڈاکٹر صاحب انتہائی ناگفتہ بہ حالات میں بھی تکلیف دہ سچ بولنے کے لیے مشہور تھے۔ 2010 میں، ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے واضح طور پر وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ کو مشورہ دیا کہ وہ استعفیٰ نہ دیں جب کئی حلقوں کی طرف سے دباو ¿ ڈالا جا رہا تھا۔ “وہ ٹھنڈے دل سے کہے گا کہ غیر معمولی حالات عارضی ہوتے ہیں۔ ہمیں ایسے وقتی حالات کے زیر اثر کوئی فیصلہ نہیں لینا چاہیے۔ مجھے یہ دیکھ کر حیرت ہوتی ہے کہ فاروق صاحب گھبرائے ہوئے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ وہ طوفان کے درمیان کشتی کو چلانے کے قابل نہیں ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here