سیدعریج ظفرآپ کےلیے 

157
تالیاں
ملک کے تئیں آپ کی خشمگی ، آپ محفوظ ہیں۔
سید عریج ظفر آپ کے لیے ہلکی تالیاں بجائیں۔ آپ اداکار ہیں، میں نہیں ہوں۔ آپ اپنے بے حد مقبول انسٹاگرام ہینڈل پر اس مصرعہ کوپرخشم انداز میں پوسٹ کر سکتی ہیں”میرا مجھ سے سب چھینا، زبانوں کو بھی کٹوایا…”
اور آپ #RambaghFakeEncounter کے ہیش ٹیگ کے ساتھ پوسٹ کر سکتے ہیں: اے شہیدو تمہارے خون سے انقلاب آئے گا! اور ایک بار پھر آپ اس تصویر کو پوسٹ کر سکتی ہیں جس میں آپ نے فیرن پہنا ہوا ہے اور اپنے چہرے پر سرخ خون کی طرح کے نقطوں کے ساتھ کانگڑی تھماے ہوئے ہو۔ نقطوں کو گولی کے نشانات کی طرح نظر آنا چاہئے۔ تصویر کے ساتھ الفاظ  “میں اس سرزمین سے آیی ہوں جہاں خزاں پتوں سے زیادہ لاشیں گراتی ہے۔ میں کشمیر سے آیی ہوں”
مہران جیسے دہشت گرد کے لیے آپ شہیدو تمہارے خون سے انقلاب آئے گا لکھتی ہیں۔ کیا آپ کو اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ مہران اور دیگر عسکریت پسندوں نے ڈاکٹر مکھن لال بندرو کو قتل کیا، جو اتنے مشہور اور مددگار کیمسٹ تھے؟ کیا آپ کو اس سے فرق پڑتا ہے کہ مہران اور دیگر عسکریت پسندوں نے ایک سکھ خاتون پرنسپل اور ایک ہندو ٹیچر کو اساتذہ کے ہجوم میں سے اٹھا کر ان میں گولیاں برسائیں؟ کیا آپ کو اس سے فرق پڑتا ہے کہ ان عسکریت پسندوں نے ایک مسلمان سیلز مین کو یہ سوچ کر مار ڈالا کہ وہ دکان کا پنڈت مالک تھا؟ کیا اس طرح کی بگڑی ہوئی سوچ آپ کے لیے کوئی اہمیت نہیں رکھتی؟ سید علی گیلانی کی وفات پر آپ نے شہید کبھی مرتا نہیں، ہر گھر میں زندہ گیلانی پوسٹ کیا۔
 عریج، آپ کے لیے دھیمی تالیاں بجائی جائیں۔ آپ یہ سب پوسٹ کر سکتی ہیں کیونکہ آپ جانتی ہیں کہ دہشت گردی کے حامی سیاسی پوزیشننگ سے آپ کشمیر میں محفوظ ہیں۔ آپ دہشت گرد نظام کی ہیروئن ہیں۔ آپ نے ان کی دہشت گردی کے راج کو حق ٹھہرایا۔ اب آپ محفوظ ہیں۔
میں دہشت گردی کے ماحولیاتی نظام کے خلاف بات کرنا چاہتا ہوں۔ مجھے چھپانا ہے۔
میں دہشت گردی کے خلاف بات کرنا چاہتا ہوں۔ میں اپنے اردگرد تنازعات کی اس کشمکش کو ختم کرنا چاہتا ہوں۔ لیکن مجھے چھپانا ہے۔ میں اپنا نام ظاہر نہیں کر سکتا۔ میں اپنی شناخت ظاہر کرنے سے کیوں ڈرتا ہوں؟ کیونکہ دہشت گرد مہران کی طرح اور بھی نوجوان آئیں گے جن کی آپ تعریف کرتے ہیں اور انہی رومانوی کردار عطا کرتی ہیں، اور وہ مجھے گولیاں برسائیں گے۔
سرخ نقطوں والی یہ تصویر گولیوں کے نشانات کی طرح نظر آتی ہے۔ مضحکہ خیز پیغام: میں اس سرزمین سے آیی ہوں جہاں خزاں پتوں سے زیادہ لاشیں بہاتی ہے۔ میں کشمیر سے آیی ہوں۔
عریج تم کس کشمیر سے آئی ہو؟ انسٹا پر آپ کی دوسری پوسٹس پر ایک نظر، اور ایسا لگتا ہے کہ آپ کا نوحہ قائم نہیں رہتا۔ خوبصورت زیرو برج پر آپ کی سائیکلنگ کی پوسٹس ہیں۔ پس منظر میں ایک نرم رومانوی گانا چل رہا ہے۔ آواز دو ہمکو، ہم کھو گئے کب نیند سے جاگے، کب سو گئے
آپ کی اچھی، صحت مند کامیڈی کرنے کی پوسٹس ہیں۔ لڈی شاہ کرتے ہوئے  آپ کی پوسٹس موجود ہیں – مزاح اور طنز کے ساتھ ہمارا روایتی لوک گانا۔ آپ کی ایک پوسٹ ہے جس میں سری لنکن میگا مارا مانیکے میگے ہیتھے پس منظر میں چل رہا ہے ۔ آپ نے کیا کہا؟ خزاں مزید لاشیں بہاتی ہے…؟
آپ جو جھوٹ پوسٹ کرتی ہیں اسے دیکھو! میرا مجھ سے سب چھینا، زبانو ں کو بھی کٹوایا… یاد رکھیں، چھینا یا چھیننے سے دور، آپ اس کشمیر میں رہتی ہیں جس نے آپ کو سب کچھ دیا ہے۔ زبانوں کو بھی کٹوایا … سنجیدگی سے، عریج؟ آپ اپنی زباں کی وجہ سے ایک سٹار پرفارمر اور سوشل میڈیا پر اثر انداز اور لڈی شاہ ہیں۔ اور آپ ملکپر الزام لگا رہی ہیں: زبانو ں کو بھی کٹوایا۔ زبردست!
ایک دوست نے ابھی میرے ساتھ ایک پوسٹ شیئر کی ہے۔ یہ 27 نومبر کو دی کشمیر مانیٹر میں شائع ہوئی تھی۔ سرخی ہی نظروں کو جکڑ دیتی ہے ۔ کشمیری اپنی نجی زندگی پبلک پلیٹ فارم پر کیوں شیئر کرتے ہیں؟ یہ تحریر کیا کہتی ہے:
“آج کل بہت سے دولہا اور دلہن اپنی نجی تصاویر سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جیسے Instagram پر اپ لوڈ کرتے ہیں یا تو اسی وقت جس وقت وہ زندگی کے کسی اہم مقام کے لئے تیار ی کررہے ہوتے ہیں یا اس کے فوراً بعد،انسٹاگرام ایسے تمام لمحات کا ذخیرہ بن گیا ہے جو کچھ عرصہ پہلے تک نجی ہوا کرتے تھے لیکن کل تک جو محض نجی چیز تھی اب وہ سوشل میڈیا کی وساطت سے ہر کسی کی دسترس میں آگیا۔ اب اسے وہاں  کوئی بھی دیکھ سکتا ہے اور اس پرتبصرہ کرسکتا ہے۔
انسٹاگرام پر کشمیری، دلہنوں اور شادیوں کی ان خوبصورت تصاویر سے ہم سب واقف ہیں۔ ہمیں اس دکھاوے پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ ہم صرف ایسے ہی ہیں، اور ہم اس سے محبت کرتے ہیں۔ جب میں سوشل میڈیا پر نوجوان کشمیریوں کی شاندار شادیوں کی سینکڑوں تصاویرکو دیکھتا ہوں اور وہ اتنے امیر اور خوش مزاج نظر آتے ہیں تو آپ کا جھوٹ بہت کھوکھلا ہو جاتا ہے۔
اس کے برعکس یہ  آپ کا پیغام ہے: میں اس سرزمین سے آیی ہوں جہاں خزاں پتوں سے زیادہ لاشیں بہاتی ہے۔ میں کشمیر سے آیی ہوں۔
حقیقت یہ ہے کہ، عریج، کہ تقریباً 200 عسکریت پسند اور ان کا اوور گراؤنڈ نیٹ ورک تنازعات کی اس لہر کو جاری رکھنا چاہتے ہیں۔ ہماری عمر کے نوجوان جہاں چاہیں پڑھ رہے ہیں، اگر وہ استطاعت رکھتے ہیں۔ ہم اپنی پسند کی پیروی کر رہے ہیں۔ ہم اپنی آزادی خود بنا رہے ہیں۔ اور پھر بھی ہمیں ہمیشہ یہ ڈھول پیٹتے رہیں کہ ہم کشمیر میں کتنے عذاب میں ہیں۔ تیری خزاں لاشوں کو بہاتی ہے …
لیکن  عریج، آپ دونوں طرف جھول رہی ہیں۔ آپ نے اپنے لڈی شاہ کے ساتھ پچھلے سال اونتی پور میں آرمی ایونٹ میں شرکت کی۔ اس کے بعد، لگتا ہے آپ نے اپنا ارادہ بدل لیا ہے۔ آپ ایک بار پھر ملک کے خلاف پر خشم پوسٹ کر رہی ہیں۔
ہاں ہمارا کشمیر مکمل نہیں ہے۔ ہمارے اپنے مسائل ہیں۔ ہم ان کے ساتھ کسی نہ کسی طرح نمٹ رہے ہیں، تاکہ کم از کم ہمارے بچے پرامن اور ہم آہنگی کے ماحول میں رہ سکیں۔آپ کی کامیڈی اور آپ کی پوسٹس سے واضح ہوتا ہے کہ آپ کا دماغ شاندار ہے۔ کیا آپ جیسے لوگ اس مسئلے کا حصہ ہیں؟ آپ تنازعات کے پہلو کو نہیں چھوڑیں گے۔ اور آپ مہران جیسے دہشت گردوں کو رومانوی کردار عطا کریں گی  اورانہیں ہیرو بناتے ہیں، جو ہماری بقائے باہمی کی نرم اور شاندار تہذیب کے بالکل مخالف ہیں۔
میرا اندازہ ہے کہ آپ اس کشمیر کو منتخب کرتی ہیں جسے آپ دنیا کے سامنے دکھانا چاہتی ہیں۔ یا تو یہ کشمیر ہی ہے جو آپ کو اپنی لڈی شاہ جیسی اداکاری سے خوشحال اور مزاحیہ اور سٹار بننے دیتا ہے۔ یا یہ وہ کشمیر ہے جہاں آپ پیلٹ انجری جیسے جعلی نشان لگاتے ہیں اور کشمیر کے بارے میں ان تمام لوگوں کے لیے غلط تاثرات پیدا کرتے ہیں جو کشمیر کوخوشحال دیکھنے کے لئے فکرمند ہیں۔
منافق، عریج

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here