کشمیر کاسیاسی منظر نامہ تیزی سے بدل رہا ہے

291
گپکار سے گاندھی نگر
سیاسی طاقت کا نیا توازن
جموں اور کشمیر کے درمیان سماجی وسیاسی دوریاں ختم ہو رہی ہیں

جموں و کشمیر کی سیاست میں بڑی تیزی سے تبدیلی آرہی ہے اور یہاں کا سیاسی منظر نامہ بھی بدل رہا ہے ۔ سیاسی اور سماجی محاذوں پر حالیہ پیش رفت اس بات کو ظاہر کرتی ہے کہؤ سیاسی طاقت کے پلڑے بھی بدل گئے ہیں ۔ آرٹیکل 370 کے خاتمے کے بعد، سری نگر میں گپکاروڈ اور جموں کے گاندھی نگر کے درمیان سیاسی طاقت کا ایک نیا توازن ابھر رہا ہے۔
انتخابی جمہوریت کا جنوبی ایشیائی تصور یہی ہیے کہ اقتدار پہ قبضہ کرنے کے لئے حکمت عملی سے جذبات کو ابھارنا، مخالفوں کو دھونس دینا اور مذہبی جذبات کو بھڑکانا ہے۔ جموں و کشمیر بھی اس سے مستثنیٰ نہیں تھا۔ جموں اور کشمیر دونوں خطوں میں ںسیاسی پارٹیاں ووٹ حاصل کرنے کے لئے اور سیاسی طاقت کو مضبوط کرنے کے لئے جذباتی مسائل پر انحصار کرتے ہیں۔ دونوں خطوں کے درمیان دراڑ پیدا کرکے انتخابی فوائد کے لئے نفرت کے بیچ بوتے ہیں ۔ جموں و کشمیر اسمبلی کے 2008 کے انتخابات صرف اور صرف علاقائی اور مذہبی بنیادوں پر لڑے گئے تھے۔ شری امرناتھ زمینی تنازعہ کے بعد، دونوں خطوں کی سیاسی جماعتوں نے انتخابی فائدے کے لیے مذہبی اور علاقائی کارڈ کھیلا۔ اس کے بعد ہونے والے پارلیمانی اور اسمبلی انتخابات میں بھی یہ سلسلہ جاری رہا۔
اب نئی تبدیلی کا مشاہدہ کریں
حال ہی میں کشمیر بار ایسوسی ایشن کے اراکین نے جموں میں اپنے ہم منصبوں کے ساتھ میٹنگ کی۔ کشمیر بار ایسوسیشن کی جموں میں وکلاء کمیٹی کے ساتھ میٹنگ کرنا اپنی نوعیت کی پہلی میٹنگ تھی۔اور یہ ملاقات خاص تناظر میں کی گئی ہیں۔
جموں اور کشمیر کی بار ایسوسی ایشن بنیادی طور پر ایک دوسرے کے مخالف رہی ہیں، اور ان کا ملاقات کرنا ہی بظاہر ایک نیی تبدیلی کا اشارہ ہیے ایک دوسرے کے تئیں دوری کا خاص وجہ صرف اور صرف کشمیر بار ایسوسیشن کا سیاسی موقف رہا ہیں۔
کشمیر کی بار ایسوسی ایشن کے آئین، جس پر حکومت نے سوال اٹھایا ہے، میں کہا گیا ہے کہ جموں و کشمیر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان ایک متنازعہ خطہ ہے۔ جموں بار ایسوسی ایشن مستقل طور پر جموں اور کشمیر کے یونین آف انڈیا کے ساتھ ہونے پر یقین رکھتی ہے، اور آئینی طور پر مکمل انضمام کا مطالبہ کرتی رہی ہے۔
5 اگست 2019 تک کا منظرنامہ
5 اگست 2019 کی صبح تک کشمیر کی بار ایسوسی ایشن کابیانیہ حاوی رہا۔ وہ کبھی بھی اہم معاملات پر جموں بار ایسوسی ایشن کے ساتھ نہیں جاتے تھے۔ دونوں کے موقف علیحدہ علیحدہ تھے، اور ایسا لگتا تھا کہ صلح کا کوئی سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔تاہم آرٹیکل 370 کی منسوخی نے اسے بدل دیا۔ یو ٹی انتظامیہ نے کشمیر بار ایسوسی ایشن کی سرگرمیوں کا سخت نوٹس لیا۔ انتظامیہ نے واضح کیا کہ کشمیر بار ایسوسی ایشن کے انتخابات اس وقت تک نہیں ہوں گے جب تک وہ اپنے آئین میں ترمیم نہیں کر لیتی۔اب، یہ کشمیر بار ایسوسی ایشن کی ایڈہاک باڈی ہے جو جموں کے وکلاء تک پہنچی ہے۔ اسی تناظر میں ایڈوکیٹ نذیر رونگا جو حریت کانفرنس کے میر واعظ گروپ کے رکن بھی ہیں اور کچھ اور وکلاء نے جموں کی بار ایسوسی ایشن کے ساتھ میٹنگ کی۔
ذرائع کے مطابق ملاقات کے دوران رونگا نے جموں و کشمیر کے وکلاء کی فلاح و بہبود کے لیے متحدہ محاذ قائم کرنے کی تجویز دی۔ یہ ماضی کے برعکس ایک نیا سیاسی باب کھلنے کی نوید ہوسکتی ہیے، یا پھر یہ ایک حکمت عملی یو وکلاء  کمیٹی کی طرف سے تاکہ UT انتظامیہ کی جانب سے مزید کارروائی سے بچنے کے لیے کیا گیا ہو۔
اس سے قبل، یہ جموں بار ایسوسی ایشن، تاجر برادری اور جموں خطہ کی سیاسی جماعت تھی جو کشمیر میں اپنے ہم منصبوں کے ساتھ بات چیت کا آغاز کرتی۔ کیونکہ بنیادی طور پرسماجی اور سیاسی گفتگو کسی نہ کسی طرح کشمیر کے اشرافیہ کے کنٹرول میں تھی۔لیکن اب منظر نامہ بدل گیا ہے۔
نذیر رونگا،اور ساتھی ریاستی کارروائی سے بچنے کے لیے بے چین
رونگا اور سری نگر بار ایسوسی ایشن میں ان کے ساتھی ان کے خلاف ریاستی کارروائی سے بچنے کے لیے بے چین ہیں۔ وہ خفیہ طور پر جموں بار ایسوسی ایشن میں اپنے ساتھیوں کے پیچھے چھپنے کی کوشش کر رہے ہیں اور اس چہرے کو پیش کر رہے ہیں جو سب ٹھیک لگے۔ ضلع مجسٹریٹ سری نگر نے سری نگر بار ایسوسی ایشن کو نوٹس بھیجے ہیں، جس میں ان سے کہا گیا ہے کہ وہ بعض اہم مسائل، خاص طور پر اس کے آئین کے متنازعہ حصوں پر اپنا موقف واضح کریں۔تاہم ضلع مجسٹریٹ سری نگر اعجاز اسد تبصرہ کے لیے دستیاب نہیں تھے۔
کہانی کے لیے الگ سیکشن
 نذیر رونگا کی ’’ کشمیر سینٹرل‘‘ سے گفتگو
ہم نے جموں بار ایسوسی ایشن کے اراکین کے ساتھ قانونی برادری کے مشترکہ مسائل پر تبادلہ خیال کیا۔
آپ کو ضلع مجسٹریٹ سری نگر کی طرف سے نوٹس جاری کیا گیا ہے جس میں آپ سے کہا گیا ہے کہ سری نگر بار ایسوسی ایشن کے آئین میں بعض متنازعہ حصوں پر اپنی پوزیشن واضح کریں۔ اس نوٹس پر آپ کا کیا رائے ہے؟
جی ہاں، ہم نے اس کا صحیح جواب دیا ہے۔ سب سے پہلے ہم جاننا چاہتے تھے کہ ضلع مجسٹریٹ سری نگر نے کس قانون کی شق کے تحت نوٹس جاری کیا ہے۔ اسے کس چیز نے نوٹس بھیجنے پہ مجبور کیا؟ اس نے کس قانونی شق کے تحت کا سہارا لیا؟ دوسرا، اعجاد اسد کے پاس ایسا کون سا مواد ہے جس کی وہ وضاحت چاہتا ہے؟ وہ بار کو اسے میں آگاہ کر دے۔اور ہمیں وہ مواد فراہم کیا جائےتاکہ ہم جواب دینے کی پوزیشن میں آئیں گے۔ آج تک انہوں نے نہ تو وہ مواد آگے بڑھایا ہے اور نہ ہی ہمیں اس بات کا اندازہ ہوا ہے کہ انہوں نے ہمیں ایسے نوٹس جاری کرنے کے لیے کس قانون کا سہارا لیا تھا۔ جب اس نوٹس کے بعد کویئ مزید خطہ کتابت رک گیا تو ہم محض نوٹس کا جواب دینا مناسب نہیں سمجھا۔ ہمیں کس بات کی وضاحت کرنی ہیں۔ پہلے اسے یہ بتانا پڑے گا۔کہ اس نے یہ بات کس بنیاد پر کہی ہے۔
آپ نے جموں بار ایسوسی ایشن کے ساتھ میٹنگ کی۔ ملاقات میں کیا بات ہوئی؟
یہ ایک غیر رسمی ملاقات تھی۔ میں نے انہیں حالیہ انتخابات پر انہیں مبارکباد دی۔ اس کے علاوہ ہم نے کچھ مشترکہ مسائل پر بات کی۔ ہم نے ان رکاوٹوں پر بات کی جن کا ہمیں اس مرحلے پر سامنا ہے جہاں ہم لوگوں کو انصاف نہیں دے پا رہے ہیں اور اس عمل میں لوگوں کا عدالتی نظام پر سے اعتماد ختم ہو رہا ہے۔ ہمارے سامنے سب سے پہلا اور اہم نکتہ یہ ہے کہ ایگزیکٹو اتھارٹی عدلیہ پر غالب ہے۔ عدلیہ خود مختار ہونے کا معیار کھو رہی ہے۔ حکام کی جانب سے عدالتی احکامات پر عمل درآمد نہیں کیا جا رہا۔دیگر مسائل بھی ہیں۔ ہائی کورٹ میں بنچوں کی تعداد کم ہے۔ اس میں اضافہ ہونا چاہیے۔
ہم اور جموں بار ایسوسی ایشن نے اس پر تبادلہ خیال کیا۔ مستقبل میں ہم عدلیہ کے حوالے سے مشترکہ پیپر بنائیں گے۔
نیز، ہمارے پاس گزشتہ دو سالوں سے صارفین کے تنازعات کے ازالے کا کمیشن اور صارفین کے تنازعات کے ازالے کا فورم نہیں ہے۔ ہزاروں عرضیاں وہاں زیر التواء ہیں لیکن ان پر کوئی توجہ نہیں دے رہا۔ ہم نے جموں و کشمیر کے چیف جسٹس سے ملاقاتوں کا سلسلہ جاری رکھا۔ انہوں نے ہمیں یقین دلایا کہ وہ اپنے اعلیٰ دفاتر کا استعمال کریں گے اور وہ گورنر سے درخواست کریں گے کہ وہ فوری طور پر کشمیر اور جموں میں صارفین کے تنازعات کے ازالے کے کمیشن اور صارفین کے تنازعات کے ازالے کے فورم کو فراہم کریں۔ مجھے نہیں لگتا کہ اس محاذ پر کوئی بہتری ہے۔
میں نے جسٹس تاشی ربستان سے بھی رابطہ کیا تھا۔ وہ اس کمیٹی کی سربراہی کر رہے ہیں جو صارفین کے تنازعات کے ازالے کے کمیشن اور ڈسٹرکٹ فورم کے قیام کے حوالے سے رپورٹ مرتب کرے گی۔ اس نے رپورٹ پیش کر دی ہے اور تمام رسمی کارروائیاں کر دی ہیں جو اسے کرنی تھی۔ انتظامیہ اس معاملے میں سنجیدہ دکھائی نہیں دیتی۔ ہم نہیں جانتے کہ ایسا کیوں ہے۔ یہ اسامیاں کیوں خالی ہیں؟ عوام کے ساتھ ساتھ وکلاء کو بھی پریشانی کا سامنا ہے۔
تیسرا، ہمیں اس مسئلے کا سامنا ہے کہ ڈیبٹ ریکوری ٹریبونل (DRT) چنڈی گڑھ میں ہے۔ اگر ہمیں بینکوں یا مالیاتی اداروں سے کوئی مسئلہ ہو تو کسی کو چندی گڑھ جانا پڑتا ہے۔ ان معاملات کو ڈی آر ٹی کے ذریعے حل کیا جاتا ہے لیکن ہمارے پاس یہ نہیں ہے۔ ہم یہاں بھی ٹریبونل چاہتے ہیں۔ ٹریبونل کی بنچ سری نگر بھی ہونی چاہیے اور جموں میں بھی۔
دستاویزات کی رجسٹریشن جیسے دیگر مسائل ہیں۔ پہلے ہمارے پاس رجسٹریشن ایکٹ، سٹیمپ ایکٹ وغیرہ تھا۔ ہم دستاویزات تیار کرتے تھے اور سب رجسٹرار کے سامنے پیش کرتے تھے جو جوڈیشل آفیسر ہوا کرتے تھے۔ وہ قوانین کے بارے میں سب کچھ جانتا تھا۔ تو ہم اسے آسانی سے کروا سکتے تھے۔
اب ہمیں متعلقہ پٹواری کے پاس جانا ہے اور وہ کہتا ہے کہ وہ خود اس کا مسودہ تیار کریں گے۔ وہاں بدعنوانی کا اڈہ بن گیا ہے اور اس عمل میں وکلاء جموں و کشمیر میں اپنی روزی روٹی سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔ ان کے پاس صرف ڈرافٹ کا یہ کام تھا اور یہ بھی ان سے چھین لیا گیا ہے۔
کیا آپ کا تعلق حریت کانفرنس سے ہے؟
میں وہ شخص ہوں جس نے بار ایسوسی ایشن کی 10 سال سے زیادہ خدمت کی ہے۔ میرے مخالفین مجھے اعتدال پسند کہتے تھے اور کہتے تھے کہ وہ ہندوستانی ہے۔ میرا تعلق حریت کانفرنس سے نہیں ہے۔ میرا ان سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ میں بار چیئرمین ہوں۔ دراصل میر واعظ عمر فاروق جس حریت دھڑے کے چیئرمین ہیں۔ میں ان کے والد کا قریبی ساتھی تھا۔ جب ان کے والد عوامی ایکشن کمیٹی سے وابستہ ہوئے تو میں ان کی مدد کیا کرتا تھا۔ دہلی کے لوگ، سی آئی کے، این آئی اے ان کے پاس آئے تھے۔ اسے دہلی لے جایا گیا، میں بھی اس کے ساتھ تھا۔ سب کچھ کھلا ہے۔ کچھ چھپا ہوا نہیں ہے۔ میرا عسکریت پسندی سے کوئی تعلق نہیں۔ میں نے زندگی بھر اس سے ہمیشہ انکار کیا۔
آپ کے بیٹے عزیر نذیر رونگا کے گھر پر 2 اکتوبر کو کاؤنٹر انٹیلی جنس کشمیر (CIK) نے چھاپہ مارا۔ کیوں؟
ایک نامعلوم شخص کی طرف سے کچھ ایف آئی آر درج تھی۔ اس نے سی آئی کے کو بتایا تھا کہ عزیر ایک دہشت گرد تنظیم قائم کرنے پر غور کر رہا ہے جس کے لیے اسے کوئی رئیس میر جو پاکستان میں ایک کشمیری دہشت گرد ہے، کی طرف سے مالی امداد فراہم کرنے جارہا تھا۔ مجھے معلوم ہوا کہ رئیس میر پاکستان میں ایک میڈیا سروس میں ملازم ہیں۔ تو یہ الزامات تھے۔ میں نے حکام کو ہمارا گھر چیک کرنے کی اجازت دی لیکن میں نے ان سے کہا کہ آپ کو ہمیں نوٹس دینا چاہیے تھا۔ ہم فون پر کچھ وضاحتیں چاہتے ہیں۔ ہم آپ کو سب کچھ دے سکتے تھے۔ یہ سب کسی نے مجھے اور میرے خاندان کو بدنام کرنے کے لیے کیا ہے۔ میرا بیٹا اس بارے میں کبھی سوچ بھی نہیں سکتا۔ میرا بیٹا چھ سال سے انگلینڈ میں تھا اس لیے اس کا اس سب بکواس سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ وہ ایسا کوئی کام کیوں کرے؟
عزیر کو سونہ وار کے مشہور ہوٹل CH2 میں انٹیلی جنس اور سیکیورٹی ایجنسیوں کے اہلکاروں کے ساتھ شراب نوشی کرتے اور کھانا کھاتے دیکھا گیا ہے۔ ایسا کیوں؟
عزیر بہت سماجی انسان ہیں۔ میری طرح وہ بھی تشدد کو ناپسند کرتا ہے۔ سیاست کے میدان میں اپنا حصہ ڈالنا چاہتے ہیں۔ کچھ لوگ ہیں جو انہیں “اپنی پارٹی” میں شامل ہونے کو کہہ رہے ہیں۔ لیکن وہ اس پارٹی میں شامل نہیں ہوا۔ لیکن وہ جلد کورٹ میں پریکٹس کے لئے میرے ساتھ شامل ہورہا ہیے
اس سیکشن کے لیے باکس
’’ کشمیر سینٹرل‘‘ کے رابطہ کرنے پر، سرجیت سنگھ اندوترا، جنرل سکریٹری جے اینڈ کے ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن جموں نے کہا، “ہم نے وکلاء کے مشترکہ مسائل جیسے رجسٹریشن، ڈیبٹ ریکوری ٹریبونل، کنزیومر کورٹ وغیرہ پر تبادلہ خیال کیا۔”
محبوبہ کی تصویر کے ساتھ ایک علیحدہ صفحہ پر مندرجہ ذیل مواد لیں
محبوبہ مفتی نے جموں کے وکلاء سے رابطہ کیا۔
ایسا لگ رہا ہیے کہ جموں کو کشمیر سے الگ کرنے والے کو بھی سمجھ آہی گیا کہ خمیازہ بہت مہنگا ہوسکتا ہیے۔
نذیر رونگا اور کشمیر کے کچھ دیگر وکلاء کی جموں میں بار ایسوسی ایشن کے ممبران سے ملاقات کے چند دن بعد، پی ڈی پی کی صدر محبوبہ مفتی نے کشتواڑ سے اپنی پارٹی ساتھی فردوس ٹاک کی مدد سے جموں بار ایسوسی ایشن کے ممبران کی ایک اچھی خاصی تعداد سے ملاقات کی ۔ ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ ملاقات کے دوران محبوبہ نے کہا کہ کشمیر ہم سے دور ہوتا جا رہا ہے۔ انہوں نے جموں کے لوگوں سے کہا کہ وہ پل بنیں اور کشمیر کے ساتھ مضبوط رشتہ برقرار رکھیں۔
’’ کشمیر سینٹرل‘‘ نے اس سلسلے میں محبوبہ مفتی سے رابطہ کرنے کی کوشش کی۔ جب اس نے’’ کشمیر سینٹرل‘‘ کا نام سنا تو اس نے کال منقطع کر دی اور اس کے بعد کوئی کال ریسیو نہیں کی۔
امندیپ سنگھ، خزانچی جے اینڈ کے ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن، جموں نے کہا، “ہم نے ان کے ساتھ کوئی آفشلی ملاقات نہیں کی۔ یہ کچھ وکیلوں اور محبوبہ مفتی کے درمیان نجی نوعیت کی بات چیت تھی۔ میں اس میٹنگ کا حصہ نہیں تھا۔ ہمارے کچھ ممبران اس سے بات کرنے اور کچھ خدشات بتانے کے لیے وہاں موجود تھے، لیکن یہ کوئی آفشل میٹنگ نہیں تھی۔ آپ پی ڈی پی رکن ایڈوکیٹ انیل سیٹھی سے بات کر سکتے ہیں۔
ایڈوکیٹ انیل سیٹھی نے بتایا، “PDP صدر جموں بار کے ساتھ بات چیت کرنا چاہتے تھے۔ چنانچہ جموں بار کو پارٹی نے میٹنگ کے لیے مدعو کیا۔ کوئی ایجنڈا نہیں تھا۔ وہ لاء گریجویٹ اور نوجوان وکلاء کے ساتھ بات چیت کرنا چاہتی تھیں۔ بات صرف یہی ہے.کوئی سیاسی ایجنڈا نہیں تھا۔‘‘
اوپر درج واقعات بتاتے ہیں کہ جموں و کشمیر میں طاقت کی سیاست کا منظر نامہ بدل رہا ہے۔ کشمیر کے وکلاء جنہوں نے “کشمیر تنازعہ” پر اپنا کیریئر بنایا تھا اور محبوبہ مفتی کو بھی آخر کار جموں کو کشمیر سے الگ تھلگ کرنے کی قیمت کا اندازہ ہو گیا ہے۔ تمام پیرامیٹرز کے مطابق یہ حکمت عملی کی چالیں ہیں۔ زمینی حقیقت بتاتی ہے کہ جموں خطہ کے لوگ آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد بہت سے محاذوں پر خود کو غیر محفوظ محسوس کر رہے ہیں۔ کشمیر کے سیاسی اشرافیہ ان  ہی شکایات پر سوار ہوکر عمومی گفتگو میں کسی قسم کا جواز پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ مانو چائے کی پیالی میں طوفان لانے کی تیاریاں زوروشور سے جاری ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here