عمل بھی درکار

368

مخمل کے دستانے میں ،آہنی ہاتھ

عسکریت پسندی کے مسئلے سے نمٹنے کے دوران، قانون نافذ کرنے والے اداروں کو ٹھوس انصاف کے اصول کو برقرار رکھنے کی ضرورت ہے۔ وقت کے ساتھ ساتھ، کشمیر میں بالائے زمین کارکنوں (OGWs) کے درمیان نیٹ ورکنگ نے خطرناک جہتیں حاصل کی ہیں۔بالائے زمین کارکنوں کی نئی نسل انتہائی بنیاد پرست اوردانشِ فنی بھی ہے۔ OGWs کی یہ نسل زیادہ تر متحرک عسکریت پسندوں کے ساتھ متنوع سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کے ذریعے جڑتی ہے اور تقریباً ایسے تمام پلیٹ فارم غیر منظم ہیں۔ اس سے سیکورٹی اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کے لیے اصل مجرموں کو پکڑنا مشکل ہو جاتا ہے۔

وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ جموں و کشمیر پولیس نے سینکڑوں نوجوانوں کو حراست میں لے کر عدالتوں میں پیش کیا ہے۔ ان نوجوانوں کے خلاف الزام یہ تھا کہ وہ مختلف دہشت گرد تنظیموں کے بالائے زمین کارکنوں  کے طور پر کام کر رہے تھے۔

تخریبی سرگرمیوں میں ان نوجوانوں کی شمولیت کیسے ہوئی؟ اگر پولیس ریکارڈ میں ان کے خلاف معمولی سی کوئی شکایت ہوتی تو انہیں ملوث سمجھا جاتا تھا۔ایس ایچ او اور دیگرنچلی سطحوں کے پولیس افسران نے وادی کشمیر میں سینکڑوں نوجوانوں کو محض اس لیے گرفتار کیا کہ یہ نوجوان ماضی بعید میں تخریبی سرگرمیوں میں بالواسطہ یا بلاواسطہ ملوث تھے۔

ذرائع سے پتہ چلتا ہے کہ جن لوگوں کو پولیس نے گرفتار کیا اور بعد میں UAPA کے تحت ان کے خلاف کیس درج کیا گیا ان میں سے زیادہ تر لوگ بالائے زمین کارکنوں کے آن لائن سنڈیکیٹ کا دور دور تک حصہ نہیں تھے۔

سچ بولنا چاہیے، چاہے وہ کتنا ہی تکلیف دہ ہو۔ پولیس افسران، اپنے اعلیٰ افسروں کے دباومیں، بھتہ خوری یا نمبرات حاصل کرنے کے لیے بے ترتیب گرفتاریاں کرتے ہیں۔ نچلی سطح پر زیادہ تر پولیس افسران بالائے زمین کارکنوں کی نئی نسل کے بارے میں بے خبر ہیں۔ جیسے ہی کوئی واقعہ ہوتا ہے، اعلیٰ افسران سے فوری کارروائی کا مطالبہ کرنے کے بعد وہ تپش محسوس کرتے ہیں۔ اس لیے بے ترتیب گرفتاریاں عمل میں لائی جاتی ہیں  ایسے سینکڑوں معاملات ہیں جن میں بغیر کسی ٹھوس ثبوت کے محض شک کی بنیاد پر گرفتاریاں کی گئیں۔

جنوبی کشمیر کے ایک گاوں میں، تین نوجوانوں کو ایک خوفناک دہشت گرد کے معاونین ہونے کے شبہ میں پوچھ گچھ کے لیے اٹھایا گیا تھا تینوں سے ماضی میں بھی کئی بار پوچھ گچھ کی جا چکی ہے۔ وہ ایک ماہ سے زائد عرصے تک پولیس کی حراست میں رہے اسی عرصے کے دوران ایک ہی گاوں کے دو نابالغ لاپتہ ہو گئے اور بعد میں عسکریت پسندوں کی صفوں میں شامل ہو گئے۔

ان میں سے بہت سے لوگ جنہیں گرفتار کیا گیا ہے اور وہ اپنی رہائی کویقینیبنانے کے لیے رقم نہیں دے سکے تھے، ان کے خلاف UAPA کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ ضلع کے ایس پی(سپرنٹنڈنٹ آف پولیس) بھی قصور وار ہیں۔ انہوں نے ہر زیر حراست کے خلاف تیار کردہ ڈوزیرکی تصدیق کی اور اسے بغیر کسی جانچ پڑتال کے متعلقہ ضلع مجسٹریٹ کو منظوری کے لیے بھیج دیا۔ اسی طرح، ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ نے ڈوزیئر کو غور سے پڑھنے یا اس پر دستخط کرنے سے پہلے پولیس افسران سے سوالات کرنے کی زحمت نہیں کی۔

ہم نے ابھی تک کوئی ایسا معاملہ نہیں دیکھا ہے جہاں ڈپٹی کمشنر نے مزید وضاحت کے لیے ڈوزئیر واپس کر دیا ہو۔ نوجوانوں کی حراست میں اس طرح کے غیر معمولی رویہ کے سنگین نتائج برآمد ہوتے ہیں۔ ہمیں یاد رکھنے کی ضرورت ہے کہ جو کہا گیا ہے اس پر بھی عمل کیا جانا چاہیے: سو مجرم بری ہو جائیں، لیکن ایک بے قصور کو سزا نہ دی جائے۔ ورنہ ضیاع ہی ضیاع ہے۔

اکثر اضلاع میں ایس پی کا مقامی آبادی کے ساتھ کوئی یا پھر کم سے کم تعامل ہیکیونکہ عوام کے ساتھ بات چیت کی کمی اس کا سبب ہے یہی وجہ ہے کہ یہ افسران لوگوں سے منقطع ہیں۔ عام شہری محسوس کرتا ہے کہ اعلیٰ سطح کے افسران مغرور ہو چکے ہیں۔ اگر ایک ضلع کا ایس پی لوگوں سے رابطہ نہیں رکھتا تو وہ اپنے خبری کیسے تیار کرے گا؟ قانون کی خلاف ورزی کرنے والوں کے ساتھ سختی ضروری ہے۔ امن پسند اکثریت کے لیے نرم رویہ رکھنا بھی اتنا ہی ضروری ہے۔’مخمل کے دستانے میں آہنی ہاتھ‘ کا نظریہ عسکریت پسندی کے خاتمے کے لیے بنیادی اصول ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here