میانے گوبرا!  ایسا مت کرو! میں آپ کو دوبارہ دیکھنا چاہتی ہوں!

729
ایک ماں اپنے جنگجو بیٹے کی موت پر بین کرتی ہے
روتے والدین، بیٹا موت کی آغوش میں جارہا ہے – کشمیر
 کشمیر کو آئے دن مسلح مقابلوں اور حملوں کا سامنا ہے ہمارے اپنے ہی ہاتھوں روز کئی افراد مارے جاتے ہیں۔ کوئی پولیس اہلکار ، کوئی عسکریت پسند  ،تو کوئی عام شہری – مگر مارا گیا فرد تو کشمیری ہی ہے ۔ کفن عام کشمیری بناتے ہیں۔ خون میں لت پت لاشوں کو ہم کشمیریوں نے کاندھا دیا ہے۔ ہمارے عزیزوں کے انتقال پر اسلام آباد یا دہلی سے کوئی ہمیں تسلی دینے نہیں آتا۔ ہم ان پر الزام کیوں لگائیں؟ موت کا یہ کھیل ہم نے خود چنا ہے۔ ہم خود اسے ختم کرنے سے انکاری ہیں۔
ہر روز کوئی نہ کوئی یتیم ہوتا ہے۔ کسی کا بچہ مارا جاتا ہے۔ اس خونین کھیل کو اب روزمرہ زندگی کا حصہ بنایا گیا ہے۔ نوحہ کناں مائیں، پریشان باپ، سوگوار رشتہ دار۔ سب کے دل و دماغ پر ایک ہی سوال ہے۔ کشمیر میں خونریزی کب ختم ہوگی؟ اگر آپ چاہیں تو چیخ سکتے ہیں اور ملککو گالی دے سکتے ہیں۔ اگر آپ چیختے ہیں اور عسکریت پسندوں کو گالی دیتے ہیں تو یہ آپ کی آخری چیخ ہوگی۔ پھر کفن تمہارا انتظار کرے گا۔
کیا کشمیر میں کوئی دن ایسا آئے گا جب لوگ آزاد اوربے فکرہوں؟ ہمارے چھوٹے بچے ہتھیار اٹھا کر مرنے کا انتخاب کیوں کر رہے ہیں؟ ہم یہ سوال پوچھنے سے ڈرتے ہیں۔ ہم جلتی بھٹی کا ایندھن کیوں بن رہے ہیں۔
کہانی کے لیے باکس
میانے گوبرا! ہتا نا یہ ما کر!
26 دسمبر کو جنوبی کشمیر کے شوپیاں اور بجبہاڑہ میں ہونے والے دو تصادم میں چار عسکریت  پسندمارے گئے۔ دو شوپیاں میں اور دو بجبہاڑہ میں مارے گئے۔شوپیاں انکاؤنٹر میں، ایک عسکریت پسند جو ایک ابھرتا ہوا کشمیری نوجوان تھا، نے اپنی زندگی کا خاتمہ کرنے سے پہلے اپنے والدین کو ایک مختصر فون کیا۔ ذرائع سے پتہ چلتا ہے کہ کال اس طرح ہوئی:
بی کھولہ ونے فائر می کر زیو معاف !
(میں فائر کھولنے جا رہا ہوں! اگر میں نے آپ کو کبھی تکلیف پہنچائی ہو تو مجھے معاف کرنا۔)
باپ: باسط! ان سے بات کرنے کی کوشش کرو! ہو سکتا ہے آپ کو اپنے آپ کو بچانے کا موقع مل جائے!
نہیں نہیں نہیں! میں فائر کھولنے جا رہا ہوں۔ لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ!
ماں: میانے گوبرا! میانے گوبرا!  ایسامت کرو! میں تمہیں دوبارہ دیکھنا چاہتی ہوں میرے بیٹے! میں تمہیں اپنی بانہوں میں لینا چاہتی ہوں! جاؤ اور اپنے ہتھیار نیچے رکھو۔ میں انتظار کر رہی ہوں گوبرا!
نہیں نہیں! میں فائر کھول دوں گا۔
ماں: گوبرا! گوبرا! ہتا نا یہ ماکر!
(میرے بیٹے! میرے بیٹے! ایسا مت کرو!)
کال منقطع ہوگئی
درد اور تکلیف
ان کے عسکریت پسندبیٹے کے مارے جانے کی خبر ملنے کے بعد والدین کو جس تکلیف کا سامنا کرنا پڑا اسے کون الفاظ میں بیان کر سکتا ہے! کتنی بار ڈراؤنا خواب انہیں ستائے گا – اس کا جسم گولیوں کے سوراخوں سے کٹا ہوا، کہیں ملبے کے نیچے پڑا ہے۔
یہ سوچ انہیں ہر روز مار سکتی ہے۔ لیکن وہ اکیلے ہی مریں گے۔ اب کوئی ان کی خیریت پوچھنے ان کے پاس نہیں آئے گا۔ چاہے انہیں کھانے کی ضرورت ہو۔ چاہے انہیں دوائیوں کی ضرورت ہو۔ چاہے انہیں گرم کپڑوں کی ضرورت ہو۔ چاہے چھت کو مرمت کی ضرورت ہے۔ چاہے انہیں لکڑی کی ضرورت ہو۔
ایک نوجوان کشمیری کا عسکریت پسندی کی طرف مائل ہونے کا تمام رومانوی جشن اب ختم ہو گیا ہے۔ نوجوان کشمیری ہاتھ میں بندوق لے کر دم توڑ گیا۔ ان کو عسکریت پسند بنانے کا مقصد پورا ہو گیا۔
نوحہ کناں والدین کشمیر کو کوس رہے ہوں گے۔ وہ شاید اس دن کو کوس رہے ہوں گے جب انہوں نے اپنے پیارے بیٹے کو جنم دیا تھا۔ ان کے ذہنوں میں اس سوال کا جواب کون دے گا کہ کیا یہی وہ دن ہے جس کے لیے ہمارے پیارے بیٹے کی پرورش ہوئی؟ ایک دن وہ ہمیں فون کرے گا اور کہے گا کہ میں مرنے والا ہوں، اگر میں نے تمہیں تکلیف پہنچائی ہو تو مجھے معاف کر دو۔ اس سب سے بڑی چوٹ، اس زخم کو کون ٹھیک کرے گا؟ درد اور غصے سے بھرے اس بوڑھے مرد اور عورت کا علاج کون کرے گا، ملک اور معاشرے کے تئیں تلخی؟
کشمیر کے ان بیٹوں کا کیا ہوگا جو خون کی ہولی کھیل رہے ہیں؟
تمام والدین کی خواہش ہوتی ہے کہ ایک دن ان کا بیٹا یا بیٹی ان پر فخر کرے۔ بچے بڑی محنت کرتے ہیں، اپنے والدین کو فخر محسوس کرواتے ہیں اور بڑھاپے میں ان کا خیال رکھتے ہیں۔ ہو سکتا ہے کچھ بچے ایسے ہوں جو زیادہ حاصل نہ کر سکیں۔ لیکن کم از کم وہ ایسے اقدامات نہیں کرتے جس سے ان کے والدین کو ہمیشہ کے لیے تکلیف ہو۔
کشمیر کے ان  بیٹوں کا کیا ہوگا جو خون کی ہولی کھیلتے ہیں، موت کو گلے لگاتے ہیں اور اپنے والدین کو ہمیشہ کے لیے زخموں کے ساتھ چھوڑ جاتے ہیں۔ یہ نوجوان معاشرے اور ریاست کے مخالفوں کی طرف سے کشمیر میں پاکستان کے ذریعے ڈالے گئے بنیاد پرست نظریات سے حوصلہ افزائی حاصل کرتے ہیں۔ یہ نوجوان اس بات سے بے خبر ہیں کہ وہ کسی کھیل کا حصہ ہیں۔ وہ اپنے کیریئر کا آغاز پتھر بازی سے کرتے ہیں۔ ان میں سے بہت سے عسکریت پسندی کی طرف چلے جاتے ہیں۔ اور پھر یہ زندگی کا خاتمہ ہے۔ عسکریت پسندوں کی صفوں میں نئے بھرتی ہونے والے کی شیلف لائف صرف 150 دن ہوتی ہے۔ ان کے والدین سمجھ نہیں سکتے کہ ان کے بیٹے نے انہیں کیوں چھوڑ دیا۔
بے گناہوں کی بنیاد پرستی میں معاشرے کا کردار
کیا ہم اس بات سے انکار کر سکتے ہیں کہ کشمیر میں کچھ والدین اپنے بچوں میں نظریات کا زہر گھولتے ہیں؟ بعد میں اگر بچے عسکریت پسندی کی طرف مائل ہوتے ہیں تو وہ اپنے بچوں یا دوسروں پر الزام لگاتے ہیں۔ ہم سب اپنے بچوں کو اپنے اعمال سے سکھاتے ہیں۔ ہم ہندوستانی ریاست پر لعنت بھیجتے ہیں۔ ہم کشمیر میں ہر خرابی کا ذمہ دار ریاستی فورسز کو ٹھہراتے ہیں۔ ہم میں سے کوئی بھی پاکستان سے یہ درخواست کرنے کی جرات نہیں کرتا کہ وہ کشمیر میں اسلحہ اور گولہ بارود کی دراندازی نہ کرے۔ کسی نے علیحدگی پسندوں کو اس کا ذمہ دار نہیں ٹھہرایاکہ انہوں نے کشمیریوں کے ذہن کس طرح سے پراگندہ کئے ۔
بہت سے والدین ریاست سے مراعات اور انعامات وصول کرتے ہیں۔ تب بھی وہ ریاست کو سفاک ہونے، لوگوں کے جذبات اور احساسات پر قابو پانے کے لیے طاقت کا استعمال کرنے پر لعنت بھیجتے ہیں۔ بچے اس نفرت کو جذب کرتے ہیں جو وہ معاشرے میں دیکھتے ہیں۔ وہ یہ سوچ کر حوصلہ پاتے ہیں کہ ریاست ہماری دشمن ہے، اس لیے ہمیں اسے سزا دینی چاہیے۔ وہ مزاحمت کو اپنا خواب اور موت کو اپنی منزل بناتے ہیں۔
اس سے زیادہ تباہ کن معاشرہ کیا ہو سکتا ہے جو ایندھن تیار کرے جس میں اس کے جوان مر جائیں؟ جس معاشرے میں اس آگ کو بجھانے کی کوئی کوشش نہ کرے اس سے بڑا المیہ اور کیا ہو گا۔ ہم سب اپنے معاشرے کے حصہ دار ہیں۔ کشمیر میں خونریزی روکنے کے لیے ہم سب برابر کے ذمہ دار ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here